Published On: Sat, Aug 31st, 2013

اسامہ بن لادن کو مارنے کے آٹھ گھنٹے بعد ڈی این اے ٹیسٹ کیا گیا

Imagesآپریشن میں القائدہ سربراہ اسامہ بن لادن کی نعش کی تصدیق کے لیے افعانستان میں قائم امریکی لیبارٹری میں ڈی این اے ٹیسٹ کیا گیا یہ انکشاف امریکی خفیہ بجٹ دستاویزات میں کیا گیا ہے دو مئی 2011 ء کو ایبٹ آباد میں اسامہ بن لادنن کو ہلاک کیا گیا امریکی اخبار نے نیشنل سیکیورٹی کونسل کے سابق کنٹریکٹر ایڈورڈ سنوڈن کو مہیا کی گئی امریکی خفیہ ایجنسیوں کی بجٹ دستاویزات کے کچھ حصے شائع کئے گئے ہیں ان دستاویزات سے یہ بات سامنے آئی ہے کہ اسامہ بن لادن کو مارنے کے آٹھ گھنٹے بعد نعش سے حاصل کردہ نمونوں کا ڈی این اے ٹیسٹ کیا گیا یہ ٹیسٹ افعانستان میں قائم امریکی ڈیفنس انٹیلی جنس ایجنسی کی ایک لیبارٹری میں کیا گیا نعش سے حاصل کئے گئے ڈی این اے کے نمونوں کو پہلے سے حاصل کردہ نمونوں سے میچ کیا گیا اور تصدیق ہوئی کہ مارا جانے والا شخص اسامہ بن لادن ہی ہے انہی دستاویزات میں یہ بات بھی سامنے آئی ہے کہ ایبٹ آباد آپریشن سے پہلے اسامہ کے کمپاؤنڈ کی سیٹلائٹ سے 387 تصاویرلی گئیں ان میں انفراریڈ تصاویر بھی تھیں دستاویزات میں بتایا گیا ہے کہ اسامہ بن لادن کی موجودگی کا پتہ چلانے کے لیے سیٹلائٹ کے ساتھ ساتھ آر کیو 170 جاسوس طیارے بھی استعمال کئے گئے اتنا سب کچھ کرنے اور ایسی بھرپور تیاری کے با وجود بھی کیا امریکی حکام کو اسامہ بن لادن کی ایبٹ آباد میں موجود پر کوئی شک ان دستاویزات کے مطابق شک تھا جب صدر باراک اوباما نے ایبٹ آباد آپریشن کی منظوری دی تب بھی امریکی خفیہ اداروں کا خیال تھا کہ ایبٹ آباد میں اسامہ بن لادن کی موجودگی کا چانس 40 سے 60 فیصد کے درمیان ہے دفاعی بجٹ دستاویزات کے مطابق اسامہ کمپاونڈ سے ملنے والی دستاویزات کی جانچ پڑتال کے لیے ستمبر 2011 میں م زید 25 لاکھ ڈالر خرچ کئے گئے

About the Author

Leave a comment

XHTML: You can use these html tags: <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>