Published On: Sat, Jun 29th, 2013

ہندی سنیما کے 100 سال: تھوڑی حقیقت، تھوڑا فسانہ

(بی بی سی نیوز)
amitabh_bachchan_shahrukh_khan

بھارت کا سنیما 100 سال کا ہو گیا ہے۔ 1913 میں بنی پہلی خاموش فلم راجہ ہریش چندر سے لے کر اس ہفتے ریلیز ہوئی بامبے ٹاكیز تک ہندی سنیما نے طویل سفر طے کیا ہے۔
کچھ لوگوں کو ان فلموں کے گیت، موسیقی، حقیقت سے کہیں بڑے کینوس یا پھر حقیقت سے دور غیر حقیقی دنیائیں پسند آتی ہیں تو کچھ کو اس سب سے الگ حقیقت کے اردگرد گھومتی، زندگی کا کڑوا سچ دکھاتی فلمیں۔
سال کے سال امیتابھ بچن، شاہ رخ، عامر اور سلمان خان جیسے ستارے ہر جمعہ کو خواب فروخت کرتے ہیں اور لوگ ہاتھوں ہاتھ ان سپنوں کو خرید بھی لیتے ہیں۔ کبھی ڈان، کبھی بازی گر تو کبھی دبنگ بن کر۔ اسی فینٹسی کے درمیان دو بیگھا زمین کسی ’اردھ ستيہ‘، ’انکر‘ یا ’ارتھ‘ کے لیے بھی نکل ہی آتی ہے۔
100 سال پورے ہونے پر فلمی صنعت میں جشن کا ماحول ہے۔ عامر خان نے اس موقع پر کہا کہ میں نے بھی یہاں 25 سال گزارے ہیں۔ اتنے سارے ہنرمند لوگوں کے ساتھ کام کرنا فخر کی بات ہے۔ کاش میں اس موقع پر کوئی فلم بنا پاتا۔
ہندی فلموں کو جتنی تعریف ملی ہے، اتنی ہی ان پر تنقید بھی ہوئی ہے لیکن ہدایتکار انوراگ كشيپ ہندوستانی سنیما کے مستقبل کو لے کر پرامید ہیں۔
انوراگ کا کہنا ہے کہ ’سنیما کا مستقبل اچھا ہی نظر آ رہا ہے۔ پورے بھارت بھر میں اب جس طرح کی فلمیں بننے لگی ہیں وہ بہت ترقی پسند ہیں چاہے وہ مراٹھی، تمل یا تیلگو فلمیں ہوں۔ اب تک ہم بندھے ہوئے تھے لیکن اب ہم لوگ اور ہمارا سنیما کھل رہا ہے، آزاد ہو رہا ہے۔ آگے جو بھی ہوگا اچھا ہی ہوگا۔‘

About the Author

Leave a comment

XHTML: You can use these html tags: <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>