Published On: Sat, Jul 27th, 2013

’پورے چاند کی راتوں میں نیند کم آتی ہے‘

-moon-aسائنس دانوں کا کہنا ہے کہ رات کو پورا چاند لوگوں کی نیند پر منفی اثر ڈالتا ہے۔
کرنٹ باؤلوجی نامی جریدے میں شائع اس تحقیق میں پتا چلا کہ جس رات پورا چاند روشن ہوتا ہے اس رات لوگوں کو سونے میں زیادہ وقت لگتا ہے اور ان کی نیند کا معیار بھی قدرے کم تر ہوتا ہے حالانکہ انھیں اندھیرے کمروں میں سونے کے لیے بھیجا گیا تھا۔
پورے چاند کی راتوں میں اس تحقیق میں شریک رضاکاروں کے جسم میں میلاٹونن نامی ہارمون میں بھی کمی دیکھی گئی۔
اندھیرے میں انسانی جسم زیادہ میلاٹونن پیدا کرتا ہے جبکہ اجالے میں میلاٹونن کم ہو جاتا ہے۔
شام کے وقت زیادہ روشنی کا سامنا کرنے یا پھر دن کے دوران کم روشنی ملنے سے بھی انسانی جسم میں میلاٹونن کی مقدار پر اثر پڑتا ہے۔
تاہم سوئٹزرلینڈ کی بیزل یونیورسٹی کے محققین کی حالیہ تحقیق سے پتا چلا ہے کہ چاند کے اثرات کا تعلق روشنی سے نہیں ہے۔
پروفیسر کاہوچن کا کہنا ہے: ’چاند انسانی نیند پر اثر انداز ہوتا ہے چاہے اس شخص کو چاند نظر بھی نہ آ رہا ہو اور اسے چاند کی شکل کے مرحلے کا بھی نہ پتا ہو۔‘
اس تحقیق کا ابتدائی مقصد چاند کے اثرات معلوم کرنا نہیں تھا۔ یہ تحقیق پہلے سے اکٹھی کی گئی معلومات کے ذریعے کی گئی۔ سائنسدانوں نے اپنے ڈیٹا میں اس بات کا اندازہ لگانا شروع کیا کہ جن راتوں میں وہ شرکا کے سونے کے بارے میں معلومات جمع کر رہے تھے، ان میں سے کون سی راتوں میں پورا چاند تھا۔
نیند پر تحقیق کرنے والے برطانوی ڈاکٹر نیل سٹینلی کا کہنا ہے کہ اس کے باوجود اس چھوٹی سی تحقیق میں اہم نتائج سامنے آئے ہیں۔
وہ کہتے ہیں: ’چاند کی اتنی اہم ثقافتی کہانی ہے کہ یہ بات حیران کن نہیں کہ اس کے اثرات ہوں گے۔ یہ ایسی لوک کہانی ہے جس میں شاید کچھ صداقت ہو۔‘
تاہم یہ معلوم نہیں ہو سکا کہ اس کی چاند کے نیند پر اثرات کا سبب کیا ہے۔ ڈاکٹر سٹینلی کہتے ہیں: ’یہ اب سائنس کا کام ہے کہ وہ جانچے کہ ہم پورے چاند کی راتوں پر مختلف انداز میں کیوں سوتے ہیں۔‘

(بی بی سی نیو ز)

About the Author

Leave a comment

XHTML: You can use these html tags: <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>