Published On: Mon, Jun 24th, 2013

مینگروز کی شجرکاری کا عالمی ریکارڈ

121219181753_srilanka_mangrovesبی بی سی
پاکستان میں سنیچر کو زیادہ سے زیادہ مینگروز یعنی یعنی تمر کے پودے لگانے کا عالمی ریکارڈ قائم کرنے کی کوشش کی جائے گی۔
اس سے پہلے سال دو ہزار دس میں بھارت نے مینگروز کے ساڑھے پانچ لاکھ پودے لگا کر یہ ریکارڈ قائم کیا تھا۔
کرکٹ میں ایک دوسرے سے سبقت لینے کے لیے کوشاں دونوں ملکوں میں مینگروز کا میچ اس وقت شروع ہوا تھا، جب دو ہزار نو میں پاکستان نے کیٹی بندر کے ساحلی علاقے میں پانچ لاکھ پینتالیس ہزار مینگروز لگائے لیکن اگلے ہی سال بھارت نے یہ ریکارڈ توڑ دیا۔
رواں سال پاکستان نے انڈس ڈیلٹا میں کیٹی بندر کے مقام پر نیا ریکارڈ قائم رکھنے کے لیے بائیس جون کا دن منتحب کیا ہے۔
گِنیز بک ورلڈ آف ریکارڈز کے قواعد کے مطابق اس ریکارڈ کے لیے صرف تین سو رضاکار شریک ہو سکتے ہیں اور سورج کی روشنی میں یہ شجرکاری کی جائے گی۔
بی بی سی کے نامہ نگار ریاض سہیل کے مطابق صوبہ سندھ کے محکمۂ جنگلات نے ساڑھے سات لاکھ مینگروز لگانے کا ٹارگٹ مقرر کیا ہے، جس کے لیے انہیں انٹرنیشنل یونین فار کنزرویشن اینڈ نیچر یعنی آئی یو سی این کی معاونت بھی حاصل ہے، جبکہ گِنیز بک ورلڈ آف ریکارڈز کے تین مبصرین اس عمل کی نگرانی کریں گے۔
آئی یو سی این کے اہلکار طاہر قریشی نے بتایا کہ 2009 میں گِنیز بک ورلڈ آف ریکارڈز کے نمائندے خود موجود تھے لیکن سکیورٹی خدشات کے باعث وہ اس بار موجود نہیں ہوں گے اور انہوں نے مقامی مبصرین تعینات کیے ہیں۔
طاہر قریشی 2009 میں مبصر کی حیثیت سے شریک ہوئے تھے۔ انہوں نے بتایا کہ سورج طلوع ہونے کے ساتھ ہی شجرکاری کا عمل شروع ہو جائےگا، رضاکاروں کے پاس چودہ سے سولہ گھنٹے ہوں گے، جس میں وہ یہ ریکارڈ قائم کر سکیں گے۔
پاکستان میں پانی کی قلت کے باعث انڈس ڈیلٹا بری طرح متاثر ہوا ہے، دریائی پانی سمندر میں نہ جانے سے مینگروز کی نشوونما میں کمی واقع ہوئی تھی لیکن سال 2010اور 2011 میں بارشیں اور سیلابی پانی نے مینگروز کو ایک نئی زندگی بخشی ہے۔
انڈس ڈیلٹا ساٹھ لاکھ ہیکٹرز پر پھیلا ہوا ہے، جس میں سے ایک لاکھ ہیکٹر سے زائد پر مینگروز کے جنگلات ہیں جبکہ کراچی سے لیکر سرکریک تک یہ میگروز چھ لاکھ ہیکٹر پر پھیلے ہوئے ہیں۔
طاہر قریشی کا کہنا ہے کہ چار سال قبل جو مینگروز لگائے گئے تھے، ان میں سے نوے فیصد محفوظ رہے ہیں۔

About the Author

Leave a comment

XHTML: You can use these html tags: <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>