Published On: Mon, Jul 15th, 2013

کھجور کے درخت سے نکلنے والی گوند آنتوں اور گردوں کی سوزش کیلئے مفید ہے

110625_lکراچی (اسٹاف رپورٹر) کھجور کے درخت سے نکلنے والی گوند آنتوں، گردوں اور پیشاب کی نالیوں کی سوزش کے لئے مفید ہے، اسے کھانے سے منہ کی بدبو دور ہو جاتی ہے، بنیادی طور پر کھجور غذائیت سے بھرپور ہے۔ یہ بات ملک کی معروف خاتون حکیم طبیبہ فرحت منظوم نے کہی۔ انہوں نے کھجور کی طبی افادیت کے حوالے سے بتایا کہ یہ مخرج بلغم اور مقوی ہے جبکہ جلن کو رفع کرتی ہے۔ کھجور پیشاب آور ہے، کھجور کو پانی میں بھگو کر اس کا پانی اگر پیا جائے تو جگر کی اصلاح اور طبیعت سے نشہ آور ادویہ کی گرانی دور کرتی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ کھجور کو دھو کر دودھ میں ابال کر استعمال کرنے سے فوری توانائی مہیا کرنے والی موثر غذا تیار ہو جاتی ہے۔ یہ غذا بیماریوں کے بعد کی کمزوریوں کے لئے حد درجہ مفید ہے۔ کھجور میں توانائی مہیا کرنے والے عناصر فوری اثر کرتے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ کھجور کا عرق اور جوشاندہ اپنے غذائی فوائد کے علاوہ مسکن ہیں، اس لئے گردوں کی سوزش، پتھری اور پرانے سوزاک میں انہیں بار بار پلایا جاتا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ کھجور کے درخت کی جڑوں کو جلا کر زخموں پر مرہم کی صورت میں لگایا جائے تو فائدہ پہنچتا ہے جبکہ اس کے سفوف کا منجن کرنے سے دانت کا درد ختم ہو جاتا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ پیٹ کے کیڑے مارنے کے لئے نہار منہ کھجور کھانا چاہئے، دل کے دورے میں کھجور کی گٹھلی سمیت کوٹ کر دینا جان بچانے کا باعث ہوتا ہے۔ تاہم انہوں نے کہا کہ آنکھوں کی سوزش میں کھجور کھانا درست نہیں ہے، اسی طرح بیماری سے اٹھنے کے فوراً بعد زیادہ مقدار میں کھجور کھانا درست نہیں۔ ماہرین طب کے مطابق کھجور بخار اور چیچک کے بعد کی کمزوری رفع کرتی ہے۔ اطباء کے نزدیک تپ دق کے دوران کھجوریں استعمال کرانے کا رجحان بڑھ گیا ہے کیونکہ کھجور مخرج بلغم ہے ا ور قبض کو رفع کرتی ہے۔ یہ کمزوری میں مفید ہے اس لئے دق کے مریضوں کو کھجور سے فائدہ پہنچتا ہے۔ خشک کھجور کو پیس کر اس میں بادام، پستہ، سونٹھ، بہی دانہ اور قرنفل ملا کر جسمانی کمزوری کے لئے ویدک طب کی مشہور دوائی بنتی ہے۔ اطباء کا یہ بھی کہنا ہے کہ کھجور کی گٹھلیوں کو آگ میں ڈال کر دھونی دینے سے بواسیر ذکے مسے خشک ہو جاتے ہیں جبکہ گٹھلیوں کو بھون کر اسے کافی کی صورت میں پیا بھی جاتا ہے۔

About the Author

Leave a comment

XHTML: You can use these html tags: <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>