Published On: Tue, Nov 12th, 2013

فارمرز ایسوسی ایٹس نے زرعی ٹیکس دینے کی مشروط پیشکش کردی

economy 24فارمرز ایسوسی ایٹس پاکستان(فیپ) نے حکومت کو رضاکارانہ طور پر زرعی انکم ٹیکس ادا کرنے کی پیشکش کر دی ہے اور بدلے میں حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ اُن کوبھی وہ تمام مراعات دی جائیں جو دوسرے ٹیکس دینے والے شعبوں کو دی جا رہی ہیں۔

لاہور میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے فیپ کے صدر ڈاکٹر طارق بچہ نے کہا کہ زرعی شعبہ ٹیکس کی کتنی شرح ہونی چاہئے اور اس کے نفاذ کوکیسے قابل عمل بنایا جائے اس حوالے سے حکومت فیپ کے ساتھ بیٹھ کر مشاورت کر ے ۔اگر حکومت فیپ کی تجاویز کی روشنی میں زرعی انکم ٹیکس وصول کرے گی تو حکومت کو 2سے3ارب روپے زرعی ٹیکس سے اکٹھے ہو سکتے ہیں

لیکن ہمارا مطالبہ ہے کہ زرعی شعبے سے جتنا ٹیکس اکٹھا ہو اس کا کم و بیش 25فیصد زراعت کی ترقی اور کسانوں کی فلاح وبہبود پر خرچ کیا جائے۔ اس موقع پر ڈائریکٹر فیپ حامد ملہی نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ لائیو اسٹاک کے شعبہ جو ملکی جی ڈی پی کا 11فیصد ہے اس کو بھی ٹیکس نیٹ میں لایا جائے اور جن فارمرز کے پاس 25یا اس سے زائد جانور ہیں ان پر فی جانور 100روپے ٹیکس عائد کیا جائے

جس سے یہ شعبہ ٹیکس نیٹ میں آ جائے گا اور حکومتی ریونیو بھی بڑھے گاتاہم زندہ جانوروں کی ایکسپورٹ پر عائد پابندی ختم کرنی ہو گی

About the Author

Leave a comment

XHTML: You can use these html tags: <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>