Published On: Fri, Aug 2nd, 2013

بجٹ اقدامات، مہنگائی کی شرح جولائی میں8.3 فیصد پر جا پہنچی

Pulses-640x330کراچی: رواں مالی سال بجٹ اقدامات کے نفاذ کے ساتھ ہی افراط زر کی شرح میں تیزی سے اضافہ ریکارڈ کیاگیا ہے۔ تاہم اس میں رمضان المبارک کے دوران عمومی طور پر مہنگی ہونے والی اشیائے خوراک کا بھی ہاتھ ہے۔ واضح رہے کہ وفاقی حکومت نے ریونیو میں اضافے کے لیے بجٹ میں مختلف ٹیکسوں کی شرح بڑھانے کا اعلان کیا تھا جس میں سب سے زیادہ اہم سیلز ٹیکس کی شرح1 فیصد کے اضافے سے 17 فیصد کرنا تھا جس پر مختلف کاروباری وعوامی حلقوں نے شدید ردعمل کااظہار کیتھا اور کہا جا رہا ہے تھاکہ سیلزٹیکس میں1 فیصد اضافہ مہنگائی کی شرح میں ڈھائی فیصد اضافے کا باعث ہوگا، یہ دعویٰ کسی حد تک درست ثابت ہوا اور رواں مالی سال کے پہلے ماہ جولائی کے دوران مہنگائی کی شرح سال بہ سال بڑھ کر 8.3 فیصد ہو گئی جو گزشتہ مالی سال کے آخری ماہ یعنی جون میں 5.9 فیصد تھی تاہم جولائی میں صارف قیمتوں کے اشاریے کی بنیاد پر افراط زر کی شرح گزشتہ سال کی اسی مدت یعنی جولائی 2012 کے مقابلے میں کمی رہی۔ گزشتہ مالی سال جولائی میں افراط زر کی شرح 9.6 فیصد رہی تھی۔ پاکستان بیورو شماریات کے مطابق ماہانہ بنیادوں پر جولائی 2013 میں افراط زر کی شرح میں 2فیصد کا نمایاں اضافہ ہوا جبکہ جون میں یہ اضافہ 0.7 فیصد اور جولائی 2012 میں صرف 0.2فیصد رہا تھا۔ اعدادوشمار کے مطابق ایک سال میں خوراک ومشروبات 8.94 فیصد مہنگے ہوئے جن میں سے جلد خراب نہ ہونے والی خوراک 6.90 اور جلد خراب ہونے والی غذائی اشیا 20.92 فیصد مہنگی ہوئیں، کلوتھنگ اور فٹ ویئر14.94، ہاؤسنگ پانی بجلی گیس وفیول چارجز 6.50، آرائشی و گھریلو مرمتی آلات 7.60، صحت پر اخراجات 7.75، تعلیمی اخراجات7.56، تفریح وکلچر8.41، کمیونی کیشن 4.90، ٹرانسپورٹ 5.74، ریسٹورنٹ و ہوٹلز8.98 اور متفرق اخراجات میں 5.37 فیصد اضافہ ہوا۔

About the Author

Leave a comment

XHTML: You can use these html tags: <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>