Published On: Wed, Sep 18th, 2013

اپنی خوبصورتی کا انتخاب کیجیئے

beauty 01قدیم رومانوی داستانوں سے لے کر آج کی جدید حقیقت تک۔ اسنو وایٹ سے لے کر آج کی بھاگ دوڑ میں الجھی عورت تک ، ہر دور میں خواتین خود کو خوبصورت بنانے کے نت نئے طریقے اختیار کرتی رہی ہیں۔ موجودہ دور میں خود کو خوبصورت بنانے کی اس دوڑ میں مرد بھی خواتین سے پیچھے نہیں بلکہ شانہ بشانہ بھاگ رہے ہیں۔

جدید ٹیکنالوجی نے ہر شعبہ میں نئی راہیں متعارف کروائی ہیں اسی طرح خوبصورتی کے شعبہ میں بھی مزید ترقی کا موجب ہے۔ اس ٹیکنالوجی بدولت اب ہر انسان اپنے لیے خود خوبصورتی کو منتخب کر سکتا ہے۔ اب کوئی بھی انسان اپنی مرضی اور پسند کے مطابق اپنے چہرے کے لیے نقوش اور جسم کے خدوخال اپنا سکتا ہے۔ سر کے بالوں سے پاوں کے ناخن تک اب ہر چیز آپ کے اختیار میں ہے۔

خوبصورتی کے اس انتخاب نے خواتین اور مردوں کو ایک نیا اعتماد دیا ہے۔ اس ٹیکنالوجی نے انسانی جسم کو مختلف حصوں میں تقسیم کیا ہے۔

دانت انسانی چہرے کی خوبصورتی کا اہم جز ہیں۔ موتیوں جیسے چمکتے دانت مسکراہٹ کو چار چاند لگا دیتے ہیں۔ نئی ٹیکنالوجی کے ذریعے ناہموار دانتوں کو بہترین شکل دی جاتی ہے اس کے ساتھ ساتھ نشان زدہ اور پیلے دانتوں کو ستاروں جیسی چمک دی جاتی ہے۔

آنکھوں کی خوبصورتی پر شاعروں نے لاکھوں کے حساب سے اشعار لکھ ڈالے ہیں۔ خوبصورت آنکھیں چہرے پر جادو کا کام کرتی ہیں اور دیکھنے والے کو اپنی سحر میں جکڑ لیتی ہیں۔ آنکھوں کی خوبصورتی کے لیے ‘ آئی لیڈ ‘ سرجری بہت مقبول ہو رہی ہے۔ اس طریقہ علاج میں آنکھوں کے پھولنے، بھاری پن، اور جھریوں کو آسانی سے ختم کر دیا جاتا ہے۔

چہرے اور گردن پر پڑنے والی جھریوں اور چربی کو بھی ختم کیا جا سکتا ہے۔ ‘ فیس لفٹ کے ذریعے چہرے کی جلد کو کانوں کی طرف کھینچ دیا جاتا ہے جس سے چہرہ کی جد تن جاتی ہے اور انسان کم عمر نظر آتا ہے۔ ‘ نیک لفٹ ‘ کے باعث گردن کے ارد گرد یا نیچے جمع ہونے والی چربی کو نکال دیا جاتا ہے جس سے چہرہ کی خوبصورتی میں کئی گنا اضافہ ہو جاتا ہے۔ اسی طرح لییکوایڈ فیس لفٹ کے استعمال سے چہرے کی شادابی کو بڑھایا جاتا ہے۔

آنکھوں کے ساتھ ساتھ خوبصورت بالوں کے قصے بھی ہر دور میں گائے جاتے رہے ہیں۔ خوبصورت بال کسی بھی انسان کے حسن میں نمایاں اضافہ کرتے ہیں۔ ‘ ہیر ٹرانشپلانٹ ‘ بالوں کو خوبصورت بنانے اور گھنا کرنے میں بہت معاون ہے۔

About the Author

Leave a comment

XHTML: You can use these html tags: <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>